جامعہ منہاج القرآن کراچی

مورخہ: 10 جون 2011ء

جامعہ منہاج القرآن کراچی کے قیام کا مقصد علم و عمل سے آراستہ ایسے طلباء تیار کرنا ہے جو علمی، فکری، سائنسی اور عملی سطح پر اسلام کو جدید عصری تناظر میں سمجھ سکیں۔ اسلام کو عصری فکری، علمی، روحانی، نظریاتی، عملی اور سائنسی اعتبار سے پوری دنیا میں موثر انداز میں پیش کرسکیں۔ عملی زندگی میں ملک و ملت کے لیے مخلصانہ اور ماہرانہ خدمات سرانجام دے سکیں اور احیائے اسلام کے لیے ایک مثالی کردار ادا کرسکیں۔

تعارف جامعہ (Introduction)

اسلام اور اس کے ماننے والوں کو ہر دور میں کسی نہ کسی چیلنج کا سامنا رہا ہے تاریخ اسلام ہمیں یہی بتاتی ہے کہ چیلنج کتنا ہی طاقتور اور خطرناک کیوں نہ ہو اسلام اپنی آفاقی اور دائمی تعلیمات کی روشنی میں بذات خود ہر چیلنج کا جواب ہے اور جب اس کے ماننے والوں نے اخلاص کے ساتھ عصری چیلنج کا مقابلہ کرنے کا عزم مصمم کیا تو باری تعالیٰ نے اپنی بارگاہ سے ان کے لیے مدد و نصرت کا نزول فرمایا اور ایسے ہر خوفناک چیلنج کا اﷲ ربّ العزت کی خصوصی توفیق اور حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی خصوصی توجہ سے ہر زمانے کی مخلص، اہل اور باہمت قیادت نے اپنی قابلیت و صلاحیت کے ذریعے ہمیشہ ڈٹ کر مقابلہ کیا۔

وہ قوت جس کے ذریعے ہر چیلنج کا مقابلہ کیا جاسکتا ہے وہ علم کی طاقت ہے جس کے حصول کیلئے قرآن و حدیث میں اہل اسلام کو خوب ترغیب دی گئی ہے، آج کے عصری چیلنج کا مقابلہ بھی ہم فقط اور فقط علم کی طاقت کے ذریعے سے ہی کرسکتے ہیں، اس کے لیے لازم ہے کہ آج ہم اپنی درسگاہوں میں جہاں تعلیم دیں وہاں فکر اسلام بھی عام کریں اس لئے کہ علم اور فکر کی دولت ہی ہماری اسلامی علمی وراثت ہے اس علمی وراثت کی امین ہر دور میں عالم اسلام کی ساری یونیورسٹیاں اور تعلیمی ادارے، قرطبہ و اندلس، بغداد و شام، بصرہ و کوفہ، مکہ و مدینہ اور حجاز و یمن رہے ہیں۔

اسی علمی وراثت کے تسلسل کو عصر حاضر میں ساری دنیا میں بالعموم اور وطن عزیز پاکستان میں بالخصوص اپنے عہد کی دانش اور عظیم مفکر، شیخ الاسلام ڈاکٹر محمد طاہر القادری مدظلہ العالی نے نہ صرف نظری بنیادوں پر اسے مسلم ذہنوں میں جاگزیں کیا ہے بلکہ عملی بنیادوں پر سینکڑوں اسکولز، بیسیوں کالجز اور منہاج یونیورسٹی لاہور (چارٹرڈ) کی صورت میں اسے ایک زمینی حقیقت بنادیا ہے اور علمی وراثت کے اسی تاریخی تسلسل کے تناظر میں یکم مارچ 2009 کو صوبہ سندھ کی سطح پر پہلی جامعہ، جامعہ منہاج القرآن کراچی کا شیخ الاسلام مدظلہ العالی نے اپنے دست اقدس سے افتتاح کرکے بھی کراچی اور سندھ کے غیور مسلمانوں کو ایک عظیم تحفہ دیا ہے۔

ان شاء ﷲ العزیز اس جامعہ کے ذریعے طلباء کی ایک ایسی افرادی قوت کو تیار کیا جائے گا جو علمی اور تحقیقی اندازمیں ہر عصری چیلنج کا جواب دے سکے جن کے ایک ہاتھ میں یونیورسٹیوں میں پڑھائے جانے والے عصری علوم ہوں اور دوسرے ہاتھ میں دینی مدارس میں پڑھائے جانے والے مذہبی علوم ہوں اس طرح وہ عصری اور مذہبی علوم دونوں کے بیک وقت حامل ہوں یوں صحیح معنوں میں دین کا ایک سچا، مخلص اور معتدل نمائندہ بن سکیں اور وہ اپنے سیرت و کردار میں نہ صرف مثالی ہوں بلکہ ان کی شخصیتوں میں جہاں غزالی و رومی کی صفات کی آئینہ دار ہو وہاں شیخ الاسلام ڈاکٹر محمد طاہر القادری مدظلہ العالی کی تربیت سے فیضیاب ہو کر عصر حاضر کے ہر چیلنج کا جواب دینے کی صلاحیت و قابلیت بھی ہو۔

اسلام اور اس کی تعلیمات سے محبت کرنے والے تمام والدین کو ہم دعوت دیتے ہیں کہ اپنی اولاد کو اسلام کی آفاقی ودائمی امن و سلامتی کی حامل اور متوازن و معتدل تعلیمات سے مزین کرنے کے لیے اس جامعہ کا انتخاب کیجئے اور اس علمی سفر میں ہمارے ہمقدم ہوجائیے یقیناً آپ کی اولاد کا روشن مستقبل اُن کا منتظر ہے۔

منہاج ایجوکیشن کونسل MEC

منہاج ایجوکیشن کونسل جامعہ منہاج القرآن کراچی کے جملہ انتظامی تنظیمی و مالیاتی امور کیلئے ایک خود مختار کونسل ہے جس کے اراکین کی تفصیل حسب ذیل ہے:

  1. لطافت محمود قادری صدر (ایم ای سی) - MBA
  2. مفتی ارشاد حسین سعیدی (جنرل سیکریٹری MEC) الشھادۃ العالمیہ دی منہاج یونیورسٹی لاہور (ایم۔ اے اسلامیات/ عربی، MBA)
  3. محمد اقبال وادھریا (ممبر ایم ای سی) B.Com
  4. محمد جمیل اجمل (ممبر MEC) ایم۔ اے (اکنامکس) ACMA
  5. فدا حسین ایڈوکیٹ (ممبر MEC) بی۔ اے۔ ایل۔ ایل۔ ایم (سابق ممبر ملیر بار ایسوسی ایشن)

تمام انتظامی، مالیاتی اور تعلیمی امور کی بہتر انجام دہی کیلئے تقسیم کار کا اصول نبھاتے ہوئے درج ذیل ذیلی کمیٹیاں تشکیل دی گئی ہیں۔

1۔ انتظامی و انضباطی کمیٹی

منہاج ایجوکیشنل کونسل کی نگرانی میں یہ ذیلی کمیٹی جامعہ ہذا کے تمام انتظامی امور کے ساتھ ساتھ نظم و ضبط اور طے شدہ قواعد و ضوابط پر عمل درآمد کی ذمہ دار ہے۔ یہ کمیٹی درج ذیل ارکان پر مشتمل ہے۔

  1. لطافت محمود قادری
  2. فدا حسین ایڈوکیٹ
  3. طیب ضیاء

2۔ تعلیمی و تربیتی کمیٹی

یہ ذیلی کمیٹی MECکی نگرانی میں جامعہ ہذا کے تعلیمی و تربیتی امور کی ذمہ دار ہے۔ معیار تعلیم کو بہتر کرنے کے ساتھ ساتھ طلباء کی اخلاقی، روحانی اور عملی تربیت کی ذمہ دار ہے۔ یہ کمیٹی درج ذیل ارکان پر مشتمل ہے۔

  1. مفتی ارشاد حسین سعیدی
  2. علامہ عطاء محمد فہیم
  3. علامہ محبوب احمد چشتی

3۔ مالیاتی کمیٹی

یہ کمیٹی منہاج ایجوکیشن کونسل کے طے کردہ مالیاتی نظام کے نفاذ کی ذمہ دار ہے۔ یہ کمیٹی درج ذیل ارکان پر مشتمل ہے۔

  1. حاجی محمد اقبال وادھریا
  2. محمد جمیل اجمل

4۔ تعمیراتی کمیٹی

یہ ذیلی کمیٹی منہاج ایجوکیشن کونسل کی نگرانی میں بلڈنگ کی مرمت اور تعمیر سے متعلقہ جملہ امور کی دیکھ بھال کی ذمہ دار ہے۔ یہ کمیٹی درج ذیل ارکان پر مشتمل ہے۔

  1. حاجی محمد اقبال وادھریا
  2. محمود میمن

اسٹاف جامعہ

مفتی ارشاد حسین سعیدی (پرنسپل)

پرنسپل

مفتی ارشاد حسین سعیدی الشھادۃ العالمیہ دی منہاج یونیورسٹی لاہور ایم۔ اے اسلامیات/ عربی، ایم۔ بی۔ اے)

وائس پرنسپل

علامہ عطاء محمد فہیم فاضل درس نظامی۔ الشھادۃ العالمیہ تنظیم المدارس فاضل عربی (کراچی شرقی بورڈ) حفظ القرآن

اساتذہ کرام

  1. مفتی ارشاد حسین سعیدی (پرنسپل جامعہ منہاج القرآن کراچی)
  2. علامہ عطاء محمد فہیم (وائس پرنسپل جامعہ منہاج القرآن کراچی)
  3. علامہ محبوب احمد چشتی (فاضل درس نظامی۔ الشھادۃ العالمیہ)
  4. محمد جمیل احمد (ایم۔ اے اکنامکس، اے۔ سی۔ ایم۔ اے)
  5. برکت علی (ایم۔ اے اکنامکس جامعہ کراچی)
  6. حافظ محمد اصغر (الشھادۃ العالمیہ دی منہاج یونیورسٹی لاہور MCS لاہور)
  7. طیب ضیاء (M.Sc. جامعہ کراچی)

اعزازی اساتذہ

  1. پروفیسر ڈاکٹر شکیل اوج پروفیسر جامعہ کراچی
  2. ڈاکٹر نعیم انور نعمانی الازہری الشھادۃ العالمیہ دی منہاج یونیورسٹی لاہور (فاضل علوم الشریعہ والاقتصاد جامعہ الازہر مصر، --- پی۔ ایچ۔ ڈی جامعہ کراچی)
  3. لیاقت حسین جیلانی ایم۔ سی۔ ایس کامسٹ لاہور
  4. پروفیسر محمد نعیم اشرف پروفیسر (NUML یونیورسٹی)

تعلیمی و تربیتی مقاصد (Educational/ Training Objectives)

  1. نوجوان نسل کی ایسی تعلیم جس کی بدولت وہ قرآن و حدیث، فقہ اور دیگر علوم شریعہ کے تحقیقی مطالعہ اور تقابل ادیان کی بنیاد پر دورِ حاضر کے مسائل اور تقاضوں کا حل پیش کرسکیں۔
  2. نسل نو کی علمی، فکری و نظریاتی اور اخلاقی و روحانی تربیت کا ایسا موثر اہتمام جس سے وہ ملک و ملت کی مخلصانہ خدمت کے اہل ہوسکیں۔
  3. نبی آخر الزماں صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی محبت و اطاعت کی ایسی تعلیم جو اُمت مسلمہ میں حقیقی وحدت کی بنیاد فراہم کرے۔
  4. طلباء کو تنگ نظری، تعصب، فرقہ پرستی اور انتہا پسندی کی محدود سوچ سے بالاتر کرکے انہیں اس قابل بنانا کہ وہ اُمت مسلمہ کے عالم گیر اتحاد کے لیے اہم کردار ادا کرسکیں۔
  5. طلباء کی ایسی اخلاقی و روحانی تربیت کرنا جس کے ذریعے وہ تعمیر شخصیت، تقویٰ، برداشت اور وسعت نظری کے حامل ہوسکیں۔
  6. طلباء کو جدید علوم سے بہرہ ور کرنا تاکہ وہ جدید پڑھے لکھے ذہن کو اسلام کی حقانیت سے روشناس کراسکیں اور کسی بھی شعبہ زندگی میں اہم کردار ادا کرسکیں۔
  7. طلباء کو جدید عصری سائنسی اور فنی تعلیم (کمپیوٹر) سے اس طرح آراستہ کرنا کہ وہ کامیاب عملی زندگی کا آغاز کرسکیں۔
  8. جدید عصر ی اور سائنسی تعلیم کے ذریعے عصر حاضر کے چیلنجوں کے مطابق اسلام کو پیش کرسکیں۔
  9. ایسی تعلیم و تربیت جس کے ذریعے طلباء خود کو معاشرے کا مفید، فعال اور باعمل شہری بناسکیں۔

نصابِ تعلیم

جامعہ منہاج القرآن کراچی میں پڑھایا جانے والا تمام عصری و شرعی علوم کا نصاب اور طلباء کے ظاہری و باطنی احوال کی اصلاح کیلئے تمام نظام العمل کالج آف شریعہ اینڈ اسلامک سائنسز دی منہاج یونیورسٹی (چارٹرڈ) لاہور کے عین مطابق ہے۔

مدت نصاب

جامعہ منہاج القرآن کراچی کے نصاب کی مدت تکمیل سات سال ہے جس کی تین سطحیں مقرر کی گئی ہیں۔

نصاب علوم شریعہ

جامعہ منہاج القرآن کراچی میں تین سطحوں پر مشتمل سات سالہ علوم شریعہ کے نصاب میں درج ذیل مضامین شامل ہیں۔

1۔ علوم اللغۃ

  1. علم الصرف
  2. علم النحو
  3. علم البلاغۃ

2۔ علوم القرآن

  1. حفظ القرآن (منتخب سورتیں)
  2. تجوید و قرات
  3. ترجمۃ القرآن
  4. تفسیر
  5. اصول تفسیر

3۔ علوم الحدیث

  1. حفظ الحدیث مع الترجمہ (منتخبات)
  2. حدیث و اصول حدیث

4۔ علوم الفقہ

  1. اصول فقہ
  2. علم الفقہ

5۔ علم العقائد و الکلام

6۔ علم التصوف والاخلاق

7۔ علوم التاریخ والثقافۃ الاسلامیہ

8۔ علوم السیرۃ والفضائل

9۔ علم الدعوۃ والارشاد

10۔ مقارنۃ الادیان

11۔ الافکار الاسلامیہ المعاصرہ

نصاب علوم عصریہ

انٹرمیڈیٹ

جامعہ منہاج القرآن کراچی کے طلباء کو بورڈ آف انٹرمیڈیٹ کراچی کے نصاب کے مطابق انٹرمیڈیٹ کروایا جاتا ہے جس میں لازمی مضامین کے علاوہ درج ذیل اختیاری مضامین میں سے کوئی سے تین مضامین کا انتخاب کرنا ضروری ہے۔

  1. کمپیوٹر سائنس
  2. اکنامکس
  3. سوکس
  4. عربی
  5. اسلامیات اختیاری
  6. ایجوکیشن
  7. تاریخ اسلام
  8. اردو اختیاری

گریجویشن

جامعہ منہاج القرآن کراچی کے طلباء کو جامعہ کراچی کے منظور شدہ نصاب کے مطابق گریجویشن کرائی جاتی ہے۔ جس میں لازمی مضامین کے علاوہ درج ذیل اختیاری مضامین میں سے انتخاب کرنا ضروری ہے۔

  1. اکنامکس
  2. سوکس
  3. ایجوکیشن
  4. عربی
  5. اسلامک اسٹڈیز
  6. تاریخ اسلام

ماسٹرز

جامعہ منہاج القرآن کراچی کے طلباء کو دی منہاج یونیورسٹی لاہور (چارٹرڈ)کے مقررہ کردہ نصاب کے مطابق اسلامک اسٹڈیز/ عربی میں ایم۔ اے کرایا جاتا ہے۔

نوٹ: فراغت پانے والے طلباء کو اضافی طور پر کسی بھی منظور شدہ یونیورسٹی سے اپنی پسند کے مضمون میں ایم اے کرنے کیلئے ہمہ جہتی راہنمائی و تعاون فراہم کیا جاتا ہے۔

نصاب کی سطحیں

جامعہ منہاج القرآن کراچی کے سات سالہ نصاب تعلیم کی درج ذیل تین سطحیں مقرر کی گئی ہیں۔

پہلی سطح

اس کا دورانیہ دو سال ہے۔ طلباء دو سالہ علوم شریعہ کے نصاب کی تکمیل پر ’’الشھادۃ الثانویۃ‘‘ حاصل کرتے ہیں جبکہ انٹرمیڈیٹ کے نصاب کی تکمیل پر کراچی بورڈ سے انٹر کی سند حاصل کرتے ہیں۔

دوسری سطح

اس کا دورانیہ دو سال ہے۔ علوم شریعہ کے نصاب کے اس حصہ کی تکمیل پر طلباء کو ’’الشھادۃ العالیۃ‘‘ کی ڈگری دی جاتی ہے۔ جبکہ کراچی یونیورسٹی سے گریجویشن مکمل کرائی جاتی ہے۔

تیسری سطح

اس کا دورانیہ تین سال ہے۔ اس دورانیہ کے علوم شریعہ کے نصاب کی تکمیل پر ’’الشھادۃ العالمیۃ‘‘ کی ڈگری دی جاتی ہے جوکہ ایم اے اسلامیات/ عربی کے مساوی ہے۔

عمومی نظم و نسق

جامعہ ہذا میں اقامتی طلباء کیلئے درج ذیل عمومی نظم و نسق کی پابندی ضروری ہے۔

  1. جامعہ کے عمومی مزاج، اغراض و مقاصد اور پالیسی کے منافی سرگرمیوں سے اجتناب کریں۔
  2. جامعہ کی طرف سے تجوید کردہ اخلاقی وروحانی نظام تربیت پر عمل کرنا ضروری ہے۔
  3. اقامتی طلباء کیلئے ہاسٹل کے قواعد و ضوابط کی پابندی ضروری ہے۔
  4. کلاس، ہاسٹل، کھیل کے میدان اور جملہ سرگرمیوں میں نظم و ضبط، باہمی تعاون، رواداری اور متانت و شائستگی کو شعار بنا یا جائے۔
  5. جامعہ کے دئیے گئے شیڈول کے مطابق ہر سمسٹر میں کم سے کم ایک باروالدین کی انتظامیہ و اساتذہ سے ملاقات کرانا ضروری ہے۔
  6. جامعہ سے ملنے والی ہدایات پر عمل کرنا اور واجبات بروقت ادا کرنا ضروری ہے۔

اخلاقی و روحانی تربیت کا انتظام

علم اگرعمل ِصالح اور خلق حسن بن کر شخصیت کو نکھار دے تو کمال ہے بصورت دیگر دنیا و آخرت میں و با ل جان و ایمان بن جاتا ہے، یہی وجہ ہے کہ جامعہ ہذا میں مثالی تعلیم کے ساتھ ساتھ اخلاقی و روحانی تربیت پر خصوصی توجہ دی جاتی ہے۔ علم کو نافع بنانے کیلئے درج ٰذیل امور نظام تربیت کا حصہ بنائے گئے ہیں۔

  1. احکام شریعت کی پابندی کروائی جاتی ہے۔
  2. نماز پنجگانہ کی پابندی کے ساتھ ساتھ نماز تہجد اور دیگر نفلی نمازوں کا اہتمام کیا جاتا ہے۔
  3. رمضان المبارک کے روزوںکے علا وہ ہر ماہ ایام بیض کے روزوں کا اہتمام کیا جاتا ہے۔
  4. ہفتہ وار محفل ذکر و نعت اور ماہانہ محفل شب بیداری کا اہتمام کیا جاتا ہے۔
  5. رمضان المبارک کے آخری عشرے میں اجتماعی مسنون اعتکاف کی پابندی کو یقینی بنایا جاتا ہے۔
  6. ہمہ وقت با وضو رہنے کی تلقین کی جاتی ہے۔
  7. شیخ الاسلام ڈاکٹر محمد طاہر القادری مدظلہ العالی کے عظیم الشان علمی و تحقیقی اور فکر ی و روحانی ویڈیو لیکچر ز ہفتہ وار سنانے کا اہتمام کیا جاتا ہے۔

یومیہ نظام الاوقات

طلباء میں وقت کی اہمیت، اسکی قدر و قیمت اور نظم و ضبط کا شعو ر پیدا کرنے کیلئے انہیں درج ذیل نظام الاوقات کا پابند کیا جاتا ہے۔

  1. بیداری برائے نماز تہجد و محفل ذکر و نعت
  2. ادائیگی نماز فجر، ورزش، سیر اور ناشتہ
  3. صبح 8:00 دوپہر 2:00 تک تدریس
  4. نماز ظہر تا عصر ظہرانہ و قیلولہ
  5. نماز عصر تا مغرب تفریح و کھیل
  6. بعد نماز مغرب کھانا و ادائیگی نماز عشاء
  7. بعد نماز عشاء تا 11:00 بجے شب سٹڈی پیریڈ
  8. آرام 11:30 بجے شب

نوٹ: موسم کے مطابق نظام الاوقات میں تبدیلی کی جاسکتی ہے۔

ہاسٹل کے قواعد و ضوابط

  • …ہاسٹل میں رہائش پذیر طلباء کیلئے درج ذیل امور کی پابندی لازم ہے۔
  1. اقامتی طلباء کیلئے اخلاقی و روحانی تربیت کے جملہ امور کی پابندی لازم ہے۔
  2. جامعہ اور ہاسٹل کی املاک کی حفاظت طلباء پر لازم ہے۔ کسی نقصان پہنچانے کی صورت میں تلافی کے ذمہ دار خود ہونگے۔
  3. رات کے سٹڈی پیریڈ میں حاضر ی کو یقینی بنانا ضروری ہے۔
  4. تمام طلباء اپنے ماحول، لباس، بستر اور کمروں کی صفائی کو یقینی بنائیں۔
  5. جملہ امور کی انجام دہی میں دیئے گئے اوقات کا رکی پابندی لازم ہے۔
  6. علاقائی زبانوں کے بجائے باہمی گفتگو کیلئے اردو، انگریزی اور عربی زبانوں کو تر جیح دی جائے۔
  7. مہمان ٹھہرانے کیلئے ہاسٹل انتظامیہ سے پیشگی تحریری اجازت لی جائے اور اوقات مطالعہ میں مہمانوں سے ملاقات نہ کی جائے۔
  8. ماحول کے تقدس کو برقرار رکھنے کیلئے شائستہ و مہذب زبان استعمال کریں۔ باہمی احترام و تعاون کو فروغ دیں۔
  9. کسی قسم کی شکایت کی صورت میں اولاً ہاسٹل انتظامیہ ثانیاً وائس پرنسپل آفس میں تحریری اطلا ع کی جائے۔
  • …ہاسٹل میں رہائش پذیر طلباء کیلئے درج ذیل امور ممنوع ہیں۔
  1. ہاسٹل و جامعہ کی چار دیواری میں گندگی پھیلانا، نشہ آور اشیاء کا استعمال کرنا۔
  2. فحش یا کسی قسم کا سیاسی، گروہی، فرقہ وارانہ یا تعصب پر مبنی لٹریچر رکھنا قطعا ممنوع ہے۔
  3. اوقات تدریس و مطالعہ کے دوران موبائل فون کا استعمال ممنو ع ہے۔
  4. بجلی و پانی کا ضرورت سے زائد استعمال یا ضیاع ممنوع ہے۔

ہاسٹل سے اخراج

درج ذیل امور میں سے کسی ایک یا زائد کے ارتکاب پر ہاسٹل کی سہولت واپس لے لی جائیگی۔

  1. اخلاقی و روحانی نظام تربیت پر عمل نہ کرنا۔
  2. ہاسٹل کے قواعد و ضوابط کی خلاف ورزی کرنا۔
  3. انتظامیہ سے عدم تعاون کا رویہ اپنانا۔
  4. ممنوع امور میں کسی کا ارتکاب کرنا۔
  5. رخصت کے بغیر ہاسٹل سے غیر حاضر رہنا۔
  6. ہاسٹل اور میس کے واجبات کی عدم ادائیگی۔

نوٹ: ہاسٹل سے اخرا ج کی اطلاع والدین/ سرپرست کو بذریعہ ڈاک تحریری طور پر دی جائے گی۔ اور اس کے بعد انتظامیہ طالب علم کے کسی قو ل و فعل کی ذمہ دار نہ ہوگی۔

قواعد حاضری و رخصت

  1. طلباء پر لازم ہے کہ باقاعدگی سے کلاسز میں حاضر ہوں۔ مسلسل تین دن تک کلاس سے یا کسی ایک پیریڈ سے غیر حاضر رہنے والے طالب علم کے خلاف داخلہ معطلی، جرمانہ یا کسی قسم کی بھی انضباطی و تادیبی کاروائی عمل میں لائی جائے گی۔
  2. مسلسل ایک ہفتہ تک غیر حاضر رہنے والے طالب علم کو جامعہ سے خارج کیا سکتا ہے۔
  3. سالانہ امتحان میں شمولیت کیلئے کم سے کم 75%حاضر ی کا ہونا ضروری ہے۔
  4. غیر حاضری کی بنیاد پر داخلہ کی معطلی یا اخراج کی صورت میں جرمانہ کے علاوہ والد یا سرپرست کا آنا ضروری ہوگا۔
  5. رخصت کیلئے درخواست مجوزہ فارم پر قبول کی جائے گی۔ ایک دن کی رخصت کلاس انچارج سے جبکہ اس سے زائد کی صورت میں کلاس انچارج کی سفارش پر وائس پرنسپل صاحب سے ہی رخصت لی جا سکے گی۔
  6. کوئی بھی رخصت پیشگی اجازت و منظوری کے بغیر قبول نہ ہوگی۔

تعطیلات

  1. ہفتہ وار تعطیل اتوار کو ہوگی۔
  2. ہفتہ وار تعطیل کے علاوہ درج ذیل ایام میں تعطیل ہوگی۔
  3. عید الفطر
  4. عید الا ضحی
  5. میلا د النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم
  6. معراج النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم
  7. شب برات
  8. عاشور ہ محرم
  9. یوم پاکستان 23 مارچ
  10. یوم آزادی 14 اگست
  11. یوم قائد اعظم 25 دسمبر
  12. یوم اقبال 9 نومبر
  13. سالگرہ شیخ الاسلام 19 فروری
  14. یوم مزدور یکم مئی
  15. یوم کشمیر 5 فروری

سالانہ تعطیلات ایک ماہ کیلئے ماہ جولائی میں ہوا کریں گی۔

فیس شیڈول

فیس بوقت داخلہ

فیس  اقامتی  غیر اقامتی
داخلہ فیس 1000 1000
Maintenance فیس 3000 2000
 میس ممبر شپ فیس 500 -----
سیکورٹی فیس (قابل واپسی) 3500 3500
ٹوٹل 8000 6500

ماہانہ فیس

فیس  اقامتی  غیر اقامتی
ٹیوشن فیس 1700 1700
ہاسٹل فیس 500 -----
میس فیس 2000 -----
ٹوٹل 4200 1700

نوٹ: امتحانی فیس، کراچی بورڈ کی رجسٹریشن فیس و دیگر امتحانی واجبات بورڈ کے شیڈول کے مطابق طلباء کے ذمہ ہونگے۔

اسکالر شپ پالیسی

ذہین اور مستحق طلباء کیلئے جامعہ میں ایک سکالر شپ پالیسی بنائی گئی ہے۔ جس کی تفصیلات حسب ذیل ہیں۔

  1. سکالر شپ کا فیصلہ ابتدائی تین ماہ کی کارکردگی کی بنیاد پر کیا جائے گا۔
  2. سکالر شپ کے علاوہ فیس میں رعایت کا کوئی تصور نہیں ہے۔
  3. ابتدائی تین ماہ کے بعد اس سکالر شپ کا فیصلہ ماہانہ بنیادوں پر کیا جائیگا۔ اور ہر ماہ کی 2 تاریخ تک اسکالر شپ کا اعلان کردیا جائے گا۔ اس سکالر شپ کا فیصلہ مندرجہ ذیل بنیاد پر کیا جائے گا۔

40 فیصد ماہانہ تعلیمی کارکردگی (ریگولر ٹیسٹ، مقالہ جات)
15 فیصد تربیت (نماز تہجد، پنجگانہ باجماعت، بزم کی سرگرمیوں میں حصہ اور اورادو وظائف کی پابندی)
15 فیصد ڈسپلن (واجبات کی بروقت ادائیگی، یونیفارم، قواعد و ضوابط کی پابندی)
10 فیصد حاضری (اسمبلی، روزانہ کی حاضری پیریڈ وائز)
20 فیصد مستحق ہونا (جس کے والد/ سرپرست کے ذرائع آمدن ناکافی ہیں)

اس Criteria پر ماہانہ Progress رپورٹ تیار ہوگی۔

جس کی بنیاد پر Top 15 طلباء کوٹیوشن فیس میں 50 فیصد تک اسکالر شپ دیا جائے گا۔

نظام امتحانات

  1. علوم شریعہ کے امتحانات سمسٹر سسٹم کے تحت لئے جائیں گے جبکہ انٹر یا بیچلر کے امتحانات بورڈ/ یونیورسٹی کے قواعد کے مطابق ہونگے۔
  2. شریعہ مضامین کیلئے ایک سمسٹر کا دورانیہ 4ماہ ہوگا۔ جبکہ شریعہ سمسٹرامتحانات کے بعد دو ماہ کیلئے بورڈ کے امتحانات کی تیار کروائی جائے گی۔
  3. امتحان میں شرکت کے اہل ہونے کیلئے حاضر ی کا کم سے کم 75 فیصد اور جملہ واجبات کا ادا شدہ ہونا ضروری ہے۔
  4. امتحان زبانی و تحریری دونوں صورتوں میں ہوگا۔
  5. زیادہ سے زیادہ دو مضامین میں فیل ہونے والا طالب علم ضمنی امتحان میں شریک ہوسکتا ہے۔
  6. ہر طالب علم کیلئے سمسٹر میں ایک Assignment لکھنا ضروری ہے۔

نوٹ:طلباء کی کارکردگی رپورٹ/ رزلٹ کا رڈ والدین/ سرپرست کو بذریعہ ڈاک بھیجا جائے گا۔

داخلے کی مطلوبہ اہلیت اور طریقہ کار (Admission Procedure)

  1. داخلے کے خواہشمند طالبعلم کا میٹرک ترجیحاً فرسٹ ڈویژن میں پاس ہونا ضروری ہے۔
  2. داخلے کے لیے درخواست مجوزہ لف شدہ فارم پر ہی قبول کی جائے گی۔
  3. حافظ قرآن اور عربی استعداد والے طلباء کو ترجیح دی جائے گی۔
  4. داخلے کے وقت عمر زیادہ سے زیادہ اٹھارہ سال ہونی چاہیے۔
  5. ٹیسٹ اور انٹرویو میں کامیاب طلباء کو ہی داخلہ دیا جائے گا۔
  6. اقامتی طلباء کا داخلہ ہاسٹل میں گنجائش کے مطابق ہی ہوگا۔
  7. داخلہ تمام واجبات کی ادائیگی کے بعد مکمل ہوگا داخلہ فارم جمع کرواتے وقت درجہ ذیل دستاویزات کا منسلک کرنا ضروری ہے۔
  • میٹرک کی سند/ رزلٹ کارڈ کی مصدقہ فوٹو کاپی
  • سابقہ تعلیمی ادارے کا کریکٹر سرٹیفکیٹ
  • والد/ سرپرست کے قومی شناختی کارڈ کی مصدقہ فوٹو کاپی
  • چار عدد پاسپورٹ سائز تصاویر

جامعہ سے اخراج

درج ذیل امور میں سے کسی ایک یا زائد کے ارتکاب پر طالب علم کو جامعہ ہذا سے خارج کردیا جائے گا۔

  1. جامعہ کے مجموعی نظم و نسق کی خلاف ورزی کرنا اور عمومی مزاج کے خلاف سرگرمیوں میں حصہ لینا۔
  2. ایک ہفتہ تک مسلسل کسی معقول عذر کے بغیر بلا اجازت غیر حاضری کرنا۔
  3. واجبات کی بروقت ادائیگی نہ کرنا۔
  4. تعلیمی و تربیتی امور میں مسلسل عدم دلچسپی اور تنبیہ کے باوجود اصلاح نہ کرنا۔
  5. امتحان میں ناجائز ذرائع کا استعمال کرنا۔
  6. انتظامیہ اور اساتذہ سے عدم تعاون یا غیر مہذب رویہ اپنانا۔

نوٹ: جامعہ سے اخراج کی صورت میں والدین/ سرپرست کو بذریعہ ڈاک تحریری اطلاع دی جائے گی۔ اسکے بعد انتظامیہ طالب علم کے کسی قول فعل کی ذمہ دار نہ ہوگی۔

سہولیات

  • توسیعی لیکچرز/ سیمینارز

طلبہ کی علمی اور تحقیقی ضروریات کو مدنظر رکھتے ہوئے طلبہ کی نمائندہ تنظیم ’’بزم منہاج‘‘ معروف دانشور، محققین اور اصحابِ قلم کے مختلف موضوعات پر توسیعی لیکچرز اور سیمینار ز کا اہتمام کرتی ہے تاکہ عصر ِحاضر کے جدید مسائل اوران کے حل سے آگاہی ہو سکے۔

بزم منہاج

طلبہ کی تجوید و قراء ت، نعت خوانی اور فن خطابت کی تعلیم سے بہر ہ ور کرنے، تصنیف و تالیف اور شعر و ادب کا ذوق پیدا کرنے نیز ان کی علمی، ادبی، فکری اور انتظامی صلاحیتوں کو اجاگر کرنے کیلئے کالج میں باقاعدہ ایک علمی و ادبی تنظیم ’’بزم منہاج‘‘ کے نام سے قائم کی گئی ہے جو درج ذیل فورمز پر مشتمل ہے۔

  1. منہاج سپیکر ز فورم
  2. منہاج نعت کونسل
  3. منہاج کوئیز فورم
  4. منہاج ترویج ادب سوسائٹی
  5. منہاج قراء فورم

منہاج اسپورٹس

منہاج اسپورٹس کے زیر اہتمام طلبہ کو تندرست و توانارکھنے کیلئے ان کی جسمانی استعداد اور طبعی میلان کے مطابق درج ذیل کھیلوں کی سہولت میسر ہے۔ فٹ بال، ہاکی، کرکٹ، والی بال وغیرہ۔

مستقبل کے امکانات (Future Career)

بیرون ملک تعلیم حاصل کرنے کی سہولت(Foreign Education)

  1. اس جامعہ میں تعلیم حاصل کرنے والے لائق اور ذہین طلباء کو بیرون ملک تعلیم حاصل کرنے کے مواقع بھی فراہم کیے جائیں گے۔
  2. ترجیحاً میرٹ پر پورا اُترنے والے طلباء کو جامعہ الازہر مصر میں، کلیہ اُصول الدین، کلیۃ الشریعہ، کلیۃ اللغتہ العربیۃ، الدراسات الخاصہ اور الماجستیر کے لیے بھیجا جائے گا۔
  3. اس کے علاوہ دیگر عرب ممالک اور یورپ میں بھیجنے کے لیے راہنمائی اور معاونت کی جائے گی۔

ایم ایس/ ایم فل اور پی ایچ۔ ڈی کی سہولت (Facility of MS, M.Phil & Ph.D)

  1. اس جامعہ میں پڑھنے والے طلباء کو اعلیٰ تعلیم کے مواقع بھی فراہم کیے جائیں گے۔
  2. جامعہ سے فراغت پانے والوں کو کراچی یونیورسٹی، وفاقی اُردو یونیورسٹی، منہاج یونیورسٹی لاہور، انڈس انسٹیٹیوٹ آف ہائر ایجوکیشن اور سندھ یونیورسٹی سے MS/ ایم فل اور Ph.D کرانے کے لیے بھرپور معاونت اور راہنمائی دی جائے گی۔
  3. مطلوبہ معیار پر پورا اُترنے والے طلباء کو جامعہ الازہر مصر اور قاہرہ یونیورسٹی مصع سے بھی Ph.D کرانے کے لیے بھرپور حوصلہ افزائی اور راہنمائی فراہم کی جائے گی۔

اسٹوڈنٹ کیریئر کونسلنگ (Student's Career Counselling)

یہ شعبہ فارغ التحصیل طلباء کو جلد از جلد باعزت اور باوقار روزگار کے مواقع فراہم کرنے کے لیے فیلڈ سے تمام شعبہ ہائے حیات سے ایسے افراد پر مشتمل ہوگا جو فارغ ہونے والے طلباء کو اُن کی صلاحیت و قابلیت کے مطابق ملازمت کی فراہمی کے مواقع اور شعبہ جات کے بارے میں راہنمائی فراہم کرے گا۔

فارغ التحصیل طلباء کے لیے روزگار کے مواقع (Employment Opportunities)

اس جامعہ سے فارغ ہونے والے طلباء وطن عزیز پاکستان کے سرکاری اور نجی شعبوں میں نمایاں خدمات سرانجام دے سکیں گے۔ سندھ پبلک سروس کمیشن اور دیگر سلیکشن بورڈ کے ذریعے منتخب ہوکر گورنمنٹ اسکولز، کالجز، یونیورسٹیز، سول سروسز اور آرمڈ فورسز، پرائیوٹ کمپنی اور معروف نجی تعلیمی، تحقیقی اداروں، اخبارات و رسائل، الیکٹرانک اور پرنٹ میڈیا اور مذہبی اداروں میں نمایاں اور اہم خدمات سرانجام دے سکیں گے نیز تحریک منہاج القرآن انٹرنیشنل کے اندرون، بیرون ملک قائم، تعلیمی مراکز، اسلامک سینٹر، اسکولز اور کالجز اور جامعات میں بھی خدمات ادا کرسکیں گے۔

باری تعالیٰ اس جامعہ کو حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے توسل سے اُمت مسلمہ کا ایک عظیم روشن مستقبل بنائے۔ (آمین بجاہ سیّد المرسلین صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم)

تبصرہ

تلاش

ویڈیو

Minhaj College Manchester
Minhaj TV
Quran Reading Pen
Ijazat Chains of Authority
AL-HIDAYAH, Quran Festival, Quran Art Work, al-Hidayah Research Institute, al-Hidayah eLearning Institute
Dr Tahir-ul-Qadri's books App Islamic Library by MQI
Presentation MQI websites
Advertise Here
Top