تحریک منہاج القرآن کے زیر اہتمام ڈاکٹر سرفراز نعیمی شہید تعزیتی ریفرنس

مورخہ: 23 جون 2009ء

ڈاکٹر سرفراز نعیمی نے باطل قوتوں کے خلاف حق کا پرچم بلند کیا وہ سچے مسلمان اور محب وطن مجاہد تھے:فیض الرحمن درانی
دہشت گردی اور خودکش حملے حرام ہیں، شہید پاکستان ڈاکٹر سرفراز نعیمی کا مشن جاری رہے گا :پروفیسر راغب نعیمی
تحریک منہاج القرآن ڈاکٹر سرفراز نعیمی شہید کے مشن کو جاری رکھے گی:شیخ زاہد فیاض
شہید پاکستان ڈاکٹر سرفراز نعیمی ہر دم رواں اور ہر دم جواں تھے ہر مکتبۂ فکر انہیں قدر کی نگاہ سے دیکھتا ہے :حافظ خان محمد قادری
ڈاکٹر سرفراز نعیمی شہید، قائد اعظم محمد علی جناح کے ساتھی، علماء و مشائخ کے وارث تھے :پیر خلیل الرحمن چشتی
ڈاکٹر سرفراز نعیمی شہید اتحاد امت کے داعی اور راہ عزیمت کے راہی تھے :خواجہ قطب الدین فریدی

Dr Sarfraz Naeemi

میرے والد نے اسلام اور وطن کے لیے جان قربان کی وہ جب تک زندہ رہے اسلام مخالف قوتوں سے لڑتے رہے ان کی شہادت رائیگاں نہیں جائے گی۔ دہشت گردی اور خود کش حملے حرام ہیں، شہید پاکستان ڈاکٹر سرفراز نعیمی کا مشن جاری رہے گا۔ ان باتوں کا اظہار پروفیسر راغب نعیمی نے تحریک منہاج القرآن کے مرکزی سیکرٹریٹ میں اپنے والد ڈاکٹر سرفراز نعیمی شہیدکو خراج تحسین پیش کرنے کے لیے منعقدہ تعزیتی ریفرنس سے کیا۔ انھوں نے کہا کہ ہم دہشت گردی کے خاتمہ کے لیے افوج پاکستان کے ساتھ ہیں۔ میرے والد گرامی قدرکی زندگی بڑی سادہ اور بے باک گزری ہے انھوں نے عشق مصطفےٰ (صلی اللہ وعلیہ و آلہ و سلم) اور وطن عزیز کی محبت کو اپنی زندگی کا مشن بنا رکھا تھا۔ انھوں نے نام نہاد طالبان کے بارے میں کہا کہ وہ اسرائیل نواز اور بھارت نواز لوگ ہیں اسلام سے ان کا کوئی واسطہ نہیں۔ ریفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مسکین فیض الرحمن درانی مرکزی امیرتحریک منہاج القرآن نے کہا کہ شہید پاکستان عاجزی اور انکساری کا پہاڑ تھے ان کی زندگی نسلوں کے لیے مشعل راہ ہے۔ انھوں نے باطل قوتوں کے خلاف حق کا پرچم بلند کیا وہ سچے مسلمان اور محب وطن مجاہد تھے۔ انھوں نے ان باتوں کو ثابت کرنے کے لیے شہادت کو بطور دلیل پیش کیا۔

Dr Sarfraz Naeemi Dr Sarfraz Naeemi

قائم مقام ناظم اعلیٰ تحریک منہاج القرآن شیخ زاہد فیاض نے اپنے خطاب میں کہا کہ تحریک منہاج القرآن ڈاکٹر سرفراز نعیمی شہید کے مشن کو جاری رکھے گی۔ انھوں نے کہا پاکستان اور عوام کے لیے بہت بڑا سانحہ ہے۔ شہید علم و عمل کے پیکر تھے انھوں نے اپنی جان دیدی مگر دہشت گردی اور بربریت کے آگے جھکنا گوارا نہ کیا۔ شیخ زاہد فیاض نے کہا کہ میں حکومت سے مطالبہ کرتا ہوں کہ علماء کی حفاظت کا فول پروف انتظام کیا جائے۔ حافظ خان محمد قادری نے اپنے پر مغز اور مدلل خطاب میں کہا کہ شہید پاکستان ہر دم رواں اور ہر دم جواں تھے۔ انھوں نے زندگی اس طرح گزاری کہ ہر مکتبۂ فکر کے علماء و دانشور انہیں قدر کی نگاہ سے دیکھتے تھے۔ وہ ایسی شخصیت تھے اپنوں نے بلایا، غیروں نے بلایا کبھی آنے جانے میں نہیں گھبرایا۔ انھوں نے بڑی ایمانداری اور جرات سے درندوں کی درندگی سے مقابلہ کیا۔

Dr Sarfraz Naeemi

Dr Sarfraz Naeemi Dr Sarfraz Naeemi

پیر خلیل الرحمن چشتی نے اپنے خطاب میں کہا کہ شہید پاکستان ڈاکٹر سرفراز نعیمی ان علماء مشائخ سے تعلق رکھتے ہیں جنہوں نے پاکستان بنانے کے لیے قائد اعظم کا ساتھ دیا۔ انھوں نے کہا کہ جنہوں نے پاکستان بنایا اب وہی علماء مشائخ پاکستان کو بچانے کے لیے قربانیاں دے رہے ہیں۔ خواجہ غلام قطب الدین فریدی نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ڈاکٹر سرفراز نعیمی شہید بڑے صلح جو اور ملنسار آدی تھے وہ اتحاد امت کے داعی تھے وہ راہ عزیمت کے راہی تھے انھوں نے کہا کہ وہ ایسے پھول تھے جس کی خوشبو آج بھی مہک رہی ہے۔ ان کے علاوہ مفتی صفدر علی قصوری، مولانا محمد حسین آزاد، سید فرحت حسین شاہ، مفتی عبدالقیوم ہزاروی، ڈاکٹر علی اکبر قادری، امداد اللہ خان قادری اور ڈاکٹر ظہور اللہ الازہری نے بھی خطاب کیا۔

Dr Sarfraz Naeemi Dr Sarfraz Naeemi

Dr Sarfraz Naeemi

Dr Sarfraz Naeemi Dr Sarfraz Naeemi

Dr Sarfraz Naeemi Dr Sarfraz Naeemi

Dr Sarfraz Naeemi Dr Sarfraz Naeemi

Dr Sarfraz Naeemi Dr Sarfraz Naeemi

Dr Sarfraz Naeemi

اس سے متعلقہ اخباری تراشے ملاحظہ کرنے کے لئے کلک کریں۔

تبصرہ

تلاش

ویڈیو

We Want to CHANGE the Worst System of Pakistan
Presentation MQI websites
Advertise Here
Top